36

اغوا اور بازیابی کیسے ہوئی؟ دعا منگی کے حیران کن انکشافات

کراچی :اغوا کے بعد بازیاب ہونے والی کراچی کی رہائشی دعا منگی نے تفتیشی حکام کو اپنا پہلا باضابطہ بیان ریکارڈ کرا دیا ۔

دعا منگی نے تفتیشی ٹیم کو ریکارڈ کروائے گئے بیان میں کہا کہ حارث اور میں چائے کے ہوٹل سے اٹھ کر ٹہلنے نکلے کہ اچانک دو لوگوں نے مجھے پکڑ کر گاڑی میں ڈال دیا، اس کے بعد شور ہونے لگا، پھر اچانک گولی چلنے کی آواز آئی۔اغوا کاروں کے چنگل سے بچ جانے والی دعا منگی نے بیان میں کہا کہ ملزمان نے میرے منہ پر ہاتھ رکھ دیا اور آنکھوں پر پٹی باندھ کر گھماتے رہے۔ ملزمان نے مجھے 3 بار دوسری گاڑیوں میں منتقل کیا اور گھماتے رہے۔

اس نے کہا کہ میں نے کسی شخص کا چہرہ نہیں دیکھا۔ ملزمان کھانا کھلاتے وقت آنکھوں سے پٹی ہٹاتے تھے۔ ہر بار کھانا دینے والے ملزمان کی آواز الگ ہوتی تھی۔ ملزمان میرے ہاتھ پاں باندھ کر کانوں میں ایئر فون لگا دیتے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں